Zaffer Bhat seek withdrawal of charges on AMU Kashmir students, Spokesman condemns continuous Detention of it's party Chairman and other's

Srinager 16 Oct The Jammu and Kashmir salvation Movement (JKSM) Chairman Zaffer Akber Bhat has  termed the suspension of Kashmiri students at Aligarh Muslim University for  offering Gaibana Namaz-e Jinaza of their senior colleague Dr Manan Wani as inhuman ,Undemocratic and highly deplorable,   said it's very  unfortunate that the  students are just  suspended for just offering  prayers,Zaffer said " it's Moral responsibility of Indian Government ,  Administration to provide Civilized atmosphere to Kashmiri students perusing studies in different state's of India.

Zaffer  has appealed the Vice-Chancellor of AMU to intervene in the matter and get the charges dropped against the students, He also demanded Govt of J&K to take up the matter with the UP govt and ensure the dropping of the charges immediately , so that they   reinstated and their harassment stopped , He strongly condemned the forces’ highhandedness across  Kashmir valley  under the garb of search operations , polls and  arresting youth's,  Zaffer  said that under the guise of so called civic  polls, entire Kashmir has been converted into a Jail   where people irrespective of their age are being arrested, Zaffer said people of Kashmir has rejected civic polls  and  demand's resolution of Kashmir issue as per wishes and aspirations of people of Kashmir through result orientated dialogue., Spokesman has  strongly condemns the continuous  house Detentions of it's party  chairman Zaffer Akber Bhat , party leader Hilal Ahmed Beig..Manzoor Ahmed .Ovais Ahmed andother Hurriyat leaders and Arrested youth's said  such Arbitrary and coercive tactics is a political vendetta and Highly condemnable. demand's immediate release of All arrested  Leaders and   youth's.

 
ظفر بٹ کا کشمیری طلباء کی معطلی کو منسوخ کرنے کا مطالبہ ،
کشمیری عوام کی انتخابات سے لاتعلقی نئی دہلی کے لئے چشم کشا،
ترجمان کا چیرمین کی مسلسل خانہ نظربندی پر شدید ردعمل کا اظہار ،
رہائی کا مطالبہ ۔
سرینگر 16 اکتوبر/  
 
سینئر مزاحمتی قائد ،جموں و کشمیر سالویشن مومنٹ چیرمین ظفر اکبر بٹ نے وادی کشمیر سے تعلق رکھنے والے چند  کشمیری طلباء کو 
سابقہ ساتھی ڈاکٹر  منان وانی کی غائبانہ نماز جنازہ ادا کرنے پر 
علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی انتظامیہ کی طرف سے معطل کرنے پر  افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا یہ انتہائی بدقسمتی اور افسوس کا مقام ہے کہ سابقہ یونیورسٹی  ساتھی کی  غائبانہ نماز جنازہ ادا کرنے پر اس طرح کا غیر جمہوری و غیر ضروری اقدام  اٹھایا  گیا،
ظفر نے کہا اس طرح کے غیر ضروری  اقدامات نہ صرف جمہوری اصولوں کے منافی ہے بلکہ قابل مذمت ہے اور اس کی جتنی بھی مذمت کی جائے وہ کم ہے،
 انہوں نے کہا ایک جمہوری مزاج میں ہر کسی نظریات کو پرامن طور و طریقہ سے اپنی بات کی آزادی ہوتی ہیں مگر جس طرح ہمارے طلباء کو باہر کی ریاستوں میں ہراساں کیا جا رہا وہ درد ناک و تکلیف دہ ہے،
   انہوں نے یونیورسٹی انتظامیہ ،جموں و کشمیر انتظامیہ سے اپیل کی ہے کہ وہ طلباء کی معطلی کو فوری طور منسوخ کرنے کے اقدامات اٹھائے تاکہ ان کے کیریئر کے ساتھ کسی بھی قسم کی چھیڑ  چھاڑ نہ ہو،
انہوں نے کہا یہ مرکزی حکومت کی اخلاقی و انسانی ذمہ داری ہے کہ وہ کشمیری طلباء کو تحفظ فراہم کریں،
انہوں نے ان طلباء پر  فوری طور پر معطلی کو منسوخ کرنے اور تمام الزامات کو رد کرنے  کا مطالبہ کیا،
ظفر نے بلدیاتی انتخابات سے کشمیری عوام کی لاتعلقی کو نئی دہلی کے لئے چشم کشا قرار دیتے ہوئے کہا کہ  مئسلہ کشمیر  کے منصفانہ اور حتمی حل   کے لئے مذاکراتی عمل  شروع کرنے کا مشورہ  دیا تاکہ جنوبی ایشائی خطہ جو مسلسل غیر یقینی صورتحال سے دوچار ہیں میں امن وامان قائم ہو ،
 
انہوں نے وادی کشمیر میں تازہ گرفتاریوں کے چکر  پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا اس اقدام سے بلدیاتی انتخابات کی اصل حقیقت واضح و  عیاں ہوئے،
  ترجمان نے پارٹی چیرمین ظفر اکبر بٹ کی مسلسل خانہ نظربندی کی پر زور مذمت کرتے ہوئے کہا جس طرح جمہوری اصولوں کو پامال کرکے ظفر صاحب اور حریت قائدین ، نوجوانوں  کو نظر بند رکھا جارہا ہے وہ فسطائی ذہنیت کی عکاسی کرتا ہے،
ترجمان نے ظفر بٹ سمیت تمام گرفتار شدہ نوجوانوں اور قائدین کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے ۔