Zaffer Bhat for British intervention in Kashmir, Need To Start Result-Oriented Dialogue,Condemns pellet firing on civilians in Kulgam,

Srinager 08 Nov The Jammu and Kashmir salvation Movement (JKSM) Chairman Zaffer Akber Bhat  has sought the intervention of Britain in resolving the lingering  Kashmir issue. He said " As the dispute was the “legacy” of the Partition brokered by Britain that country should play a major role in its settling,He said that the " it was the moral responsibility of Britain to intervene as they were the ones who left Kashmir unresolved in 1947,Zaffer Bhat has strongly condemned the indiscriminate pellet firing in South Kashmir's  Qaimoh Kulgam district, He said govt forces  fired  pellets  indiscriminately on unarmed civilians in which many civilians injured, some of them  hitting eyes and other vital organs which is heart wrenching, He said New Delhi' must shun military might approach as Kashmir is a human and political issue ,

 He said that It's  time to both the countries that they   should attempt to create a conducive atmosphere to start  dialogue process.

He hoped that both the countries will shun the confrontational attitude and adopt meaningful dialogue to resolve all outstanding issues including lingering  Kashmir,"He said "Any tough posturing by either side will do no good to ensure peace and stability in South Asia. And while talking about Kashmir, both the sides need to keep in mind that aspirations of the people of Jammu and Kashmir need to be taken into account,

Zaffer Bhat expresses his  concern over the deteriorating health conditions of inmate's and prisoner's of Kashmir valley in different prisons of  and outside of  Kashmir valley,He Demand's release of All arrested youth's and leader's .

 ظفر بٹ نے  مئسلہ کشمیر پر  برطانیہ کی  مداخلت اخلاقی ذمہ داری قرار دیا،

کلگام میں عام شہریوں پر پلیٹ فائرنگ کی پرزور مذمت،دونوں ممالک کو بات چیت کے لئے سازگار ماحول قائم کرناچاہیے ۔سرینگر 08 نومبر/

سینئر مزاحمتی قائد،جموں و کشمیر سالویشن مومنٹ چیرمین ظفر اکبر بٹ نے کہا ہے  مئسلہ کشمیر کے منصفانہ اور قابل قبول حل کے خاطر برطانیہ کو پہل کرنے چاہیے اور  اقدامات اٹھانے چاہیے تاکہ جنوبی ایشائی خطہ میں پرامن ماحول قائم ہو، جو جنگوں کی آماجگاہ بن رہا ہے،

 چنانچہ مئسلہ کشمیر اصل میں برطانیہ کے غلط ،فیصلوں، پالیسیوں کی دین ہیں جنہوں نے 1947 ء میں ہندوستان و پاکستان کے نام پر دو ممالک کا وجود عمل میں لایا مگر کشمیر پر غلط فیصلہ صادر کر کے اس مئسلہ کو جنم دیا،

ظفر نے برطانوی حکومت،سیاسی قیادت سے درد مندانہ اپیل کی ہے کہ وہ مئسلہ کشمیر کے منصفانہ،قابل قبول حل کے لئے ہندو پاک کے درمیان جامع مذاکرات کے لئے ماحول سازگار بناۓ اور  ایسے اقدامات اٹھائے جن سے خطہ میں امن وامان قائم رہے اور مئسلہ کشمیر کے حل میں رکاوٹیں دور ہو چونکہ یہ آپ کی اخلاقی و انسانی ذمہ داری بنتی ہیں کیونکہ آپ نے 1947ء میں جموں و کشمیر کو حالات کے رحم و کرم پر چھوڑ کر اس کا فیصلہ نہیں کیا جس کی وجہ سے جنوبی ایشائی خطہ خصوصی طور ہندو پاک کی دو بڑی طاقتیں آپس میں مخاصمت کی راہ پر گامزن ہے،

اور لاکھوں انسانی جانوں کا ضیاع ہوا جو انسانی خصلتوں کے منافی ہے اور انسانی جانوں کا ضیاع ہونا انتہائی درد ناک و تکلیف دہ ہیں،

انہوں نے توقع ظاہر کی ہے کہ برطانیہ مئسلہ کشمیر کو حل کرنے میں اپنا خاصہ اثر و رسوخ استعمال کرکے  اس مئسلہ کو حل کرنے میں اپنا رول ادا کرئے گا،

ظفر نے کلگام میں عام شہریوں پر فورسز کی طرف سے اندھادھند پلیٹ فائرنگ پر شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے،

انہوں نے کہا عام شہریوں پر جس طرح اندھادھند پلیٹ فائرنگ کی گئی جس کے نتیجے میں کئی شہری شدید طور پر زخمی ہوئے،

کئی کی آنکھوں میں پلیٹ پیوست ہوئے ہیں جوکہ انسانی دلوں کو بری طرح چھلنی و مجروح کرتا ہے،

جس کی ہم شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں،

انہوں نے زخمی ہوئے نوجوانوں کے لواحقین سے یکجہتی کا اظہار کیا ہے اور کہا ہم آپ کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں،

انہوں نے نئی دہلی کی طاقت و قوت پر مبنی پالیسی کو فوری طور بند کرنے کی مانگ کی ہے،

انہوں نے کہا دونوں ممالک کو مخاصمت کی راہ کو خیر باد کہہ کر پرامن طریقے سے اس دیرینہ مئسلہ کو مذاکراتی عمل کے ذریعہ حل کرنا چاہیے،

انہوں نے توقع ظاہر کی کہ دونوں ممالک کی سیاسی قیادت اس مئسلہ کو مذاکراتی عمل کے ذریعہ حل کرنے کے لئے اقدامات اٹھائے تاکہ خطہ میں قیام امن ممکن ہو سکھے اور لوگ پرامن طور و طریقہ سے اپنی زندگی گزاریں ۔

انہوں نے کشمیر اور کشمیر کے باہر جیلوں میں نظر بند کشمیری اسیروں،سیاسی قیدیوں،نظربندوں کی حالت زار اور تازہ گرفتاریوں پر 

گہرے تشویش ظاہر کی ہے،

انہوں نے تمام گرفتار شدہ نوجوانوں اور نظربندوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے ۔