Syed Salah u Din nor any Kashmiri are terrorist. Zafar.

 Press releaseSrinagar,27th June: Syed Salahudin and any Kashmiri pursuing right to self-determination are not terrorist because this right is guaranteed by UN and Indian leadership including its first PM late Pandit Jawahar Lal Nehru has pledged that soon as normalcy is restored in occupied Jammu and Kashmir people will be asked to express their aspiration about the political destiny of state.

” They will go their way and we will go our way” ,were the historical words of late Nehru said ,Zafar in an interview with a BBC correspondent .

Senior Huriyat leader and chairman Salvation Movement, Zafar Akbar who was under house arrest for last fifteen days ,today in an interview expressed his view point and during his comments over the statement issued by USA ,wherein they have listed Salah u Din as terrorist .

Addressing to correspondent of BBC ,Zafar disclosed that in 2000 during a brief span of ceasefire between armed wing Hizb ul Mujahedeen and Indian forces , state department of USA and GOI recognized Hizb ul Mujahedeen and its supreme Commander Syed Salah u Din as party to dispute when its operational commander Late Abdul Majid Dar announced unilateral ceasefire in and initiated dialogue with the then Home secretary of India Mr. Kamal Pandey at Nehru guest house Srinagar.

How you can America or any country contrary to the fact that it is an indigenous movement and brave hearts always carved for peaceful resolution, declare him terrorist.

It was authorities that they accepted him party to dispute and stress both India and Pakistan to come forward and start dialogue for permanent resolution of Kashmir dispute said Zafar.

Liking or disliking is not a parameter or any yard stick and people pursuing an issue which is on UNO agenda ,have right to press their demands and instead of declaring Salah u Din a terrorist , and while referring to Kashmir issue ,Zafar said that it was better for USA to visit annals of history and look their statements relating to this issue.

USA need to rethink and send fact finding mission to Kashmir to ascertain the appalling situation in disputed territory ,said Zafar during his interaction with BBC correspondent .

He said “that forces are terrorizing Kashmiris while arresting, killings, carrying massacres, showering pellet and bullets , harassments, using sexual assault as weapon of war against women and killing youth through fake encounters are now so rampant that each soul in state run for safety and feel insecure in highly militarized zone.

He said that it is unfortunate that those rhetoric to be champions of human rights, are spoiling the spirit of all norms and it is very sad that despite tall claims, even on the eve of Eid celebrations not a single political activist was released.

Meanwhile spokesman strongly condemn use of brute force over the mourners after Eid prayers in different parts Kashmir.

He also condemned the restrictions and denounced the curbs on Huriyat leadership including Zafar Akbar Bhat and said, ’that all these leaders were barred from offering Eid prayers’’پریس ریلیز 

: سید صلاح الدین یا وطن عزیز کی آزادی کے لئے جدوجہد کرنے والے دہشت گرد نہیں۔عید کے موقع پر قیدیوں کو رہا نہ کرنے کی شدید تنقید ،ظفر اکبر 

سرینگر جون 27 : سید صلاح الدین یا وطن عزیز کی آزادی کے لئے جدوجہد کرنے والے دہشت گرد نہیںبلکہ ایک ایسے حق کے لئے جستجو کررہے ہیں جس کی ضمانت اقوام عالم نے دی ہے ۔ان خیالات کا اظہار جموں کشمیر سالویشن مومنٹ کے چیرمین اور سینئر حریت رہنماءظفر اکبر بٹ نے بی بی سی کے ساتھ ایک انٹرویو کے دوران کیا ۔انھوں نے تاریخ اور بھارت کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لعل نہرو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ انھوں نے اپنے تاریخی خطاب میں جموں کشمیر کے عوام کا حق تسلیم کرتے ہوئے اس بات کا وعدہ کیا ہے کہ حالات ٹھیک ہوتے ہی لوگوں کو ریاست سے متعلق اپنی رائے ظاہر کرنے کا موقع دیا جائے گا ۔انھوں نے کہا تھا کہ ریاست کے عوام اپنا فیصلہ کرکے اپنی راہ اختیارر کریں گے اور ہم اپنی راہ ۔

سینئر حریت لیڈر ظفر اکبر جو گزشتہ پندرہ دنوں سے گھر میں نظر بند تھے ،نے آج رہا ہوتے ہی بی بی سی کے نمائندے کے ساتھ بات کرتے ہوئے سال 2000میں کئے گئے حزب الجاہدین اور بھارتی حکومت کے درمیان فائر بندی کا خلاصہ کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت کے بھارتی نمائدے مسٹر کمل پانڈے نے سرینگر میں آکر حزب المجاہدین کے نمائدوں سے بات کی تھی اور کہا کہ اس وقت امریکی حکومت اودہلی انتظامیہ نے صلاح الدین کو جموں کشمیر کے تنازءسے متعلق ان کے نمائندہ کردار کو تسلیم کیا تھا اور اب وہ کیسے دہشت گرد کہلایا جاسکتا ہے ۔انھوں نے حزب الجاہدین کے اس وقت کے آپریشنل چیف مرحوم عبدلمجید ڈار کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ انھوں نے بھارت کے ساتھ جنگ بندی کو عملانے کے لئے باضابطہ اعلان کیا تھا۔ 

ظر اکبر نے انٹرویو کے دوران کہا کہ تحریک آزادی جموں کشمیر ایک مقامی جستجو ہے اور اسے کسی بھی عالمی تنظیم کے ساتھ کوئی رشتہ ناطہ نہیں ہے اور اس بات کا اعادہ کیا کہ مسلح جدوجہد کے سرفروش ایک پرامن حل کی جانب بڑھ رہے ہیں۔

انھوں نے انٹرویو کے دوران بات کرتے ہوئے کہا کہ ذاتی پسند یا ناپسندیدگی کوئی طریقہ نہیں بلکہ اس بات کا جائزہ لینے کی ضرورت ہے کہ یہ مسئلہ بین الاقوامی فورم اقوام متحدہ کے ایجنڈہ پر بھی موجود ہے ۔انھوں نے امریکی ذمہ داروں کو مشورہ دیا کہ وہ تحریک کشمیرسے متعلق 70سالہ تاریخ اور واقعات کا جائزہ لیںاور اپنے ان بیانات کا بھی جائزہ لیں جو وقتاََ فوقتاََ امریکی ذمہ داروں نے اجرا کئے ہیں ۔ انھوں نے اپنے بیان امریکی حکام کو ریاست میں جائزہ مشن بھیجنے کی بات کرتے ہوئے کہا کہ تجارتی مفادات سے اوپر اٹھ کر انسانی جزبات اور احساسات کا جائزہ لیں

ظفر اکبر بٹ نے ریاست میںجاری کشت و خون کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ گرفتاری،قتل و غارت گری ،پیلٹ سے بینائی چھین لینا ،گولیوں کی دھندھناہٹ اور عصمت ریزیوں کو خواتین کے خلا ف جنگی ہتھیار کے طور استعمال کیا جارہا ہے ۔انھوں نے نوجوانوں کو تختہ مشق بنانے کی کاروئیوں کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ انھیں فرضی جھڑپوں میں ہلاک کیا جارہا ہے۔ظفر اکبر بٹ نے کہا کہ دنیا کے اس خطے میں زبردست فوجی جماﺅ کی وجہ سے عزت و جان محفوظ نہیں۔

نھوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جو لوگ جمہوریت اور انسانی حقوق کی دہائی دے رہے ہیں وہی لوگ ان اصولوں کو پامال کرنے میں پیش پیش ہیں۔انھوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ عید کے اس مقدس موقعے پر بھی محبوسین کو رہا نہ کیا گیا 

۔ترجمان 

جموں کشمیر سالویشن مومنٹ