JKSM Pay rich tributes to Asiya, Nilofar

 Srinagar, May 29, 2019: Paying rich tributes to Asiya and Neelofar on their 10th anniversary, chairman JK Salvation Movement, Zafar Akbar Bhat, said that the double rape and murder case of Asiya and Neelofar should be reopened and demanded stern punishment to the culprits, saying that justice delayed is justice denied. The accused in the case are still roaming free, saying the killers were provided the opportunity to escape the grip of law and justice.

It is sad that when even primary investigations were not started, the culprits were provided the safe passage, Zafar Akbar added.

People of Jammu Kashmir and family of Asiya and Neelofar are still waiting for fair trail and demanding that the persons involved in that ‘heinous’ crime should be dealt with firm hands and they should be brought to books for their wrong doings, said Zafar. On his direction a delegation led by Javed Ahmed visited shopian and express solidarity with affected families .

He expressed his deep dismay over the way the kashmiri detenee are treated .They are being implicated in false cases and snail’s pace proceedings in court is more worrying and disturbing ,he added .

While paying tributes to recent martyrs at kokernag and kulgam zaffar said that these sacrifices will not go waste.

Resistance leaders and acgtivists are suffering from multiple ailments, said Zafar Akbar and demanded her immediate release  of all political detenees including party leaders Hilal Ahmed Beig,Manzoor ahmed,Mohammad Yaseen and proper treatment. He urged immediate shifting of all detainees to valley  and their release on auspicious occasion of Eid ul Fitr.

Zafar Akbar in his appeal to Prime minister of India and Pakistan stressed to start negotiation and solve all issues including Kashmir issue at priority basis .This is the only way to stop killing cycle and devastation in the region.

 Spokesman

 JK Salvation Movement

 پ

 

پریس ریلیز 

 سرینگر مئی29: جے کے سالویشن مومنٹ کے چیرمین ظفر اکبر بٹ نے آسیہ اور نیلوفر کی دسویں برسی پر انہیں یاد کرتے ہوئے اور خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ اس کیس کی نئے سرے سے تحقیقات ہونی چاہئے اور ان کے لواحقین کو انصاف ملنا چاہئے ۔انھوں نے اس سلسلے میں عدالت کی نگرانی میں ایک بار پھر کاروائی کا آغاز کرنے کے مطالبے کو درست قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے انصاف کے تقاضے پورے ہوں گے اور مجرموں کو قرار واقعی سزا ملے گی ۔انھوں نے اس بات کو دہرایا کہ ملزمین کو قانون کی گرفت سے بچنے کے لئے مواقع فراہم کئے گئے اور اس طرح انصاف فراہم کرنے کے بجائے انصاف کا ہی گلہ گھونٹ دیا گیا ۔ انھوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ تحقیقات شروع کرنے سے قبل ہی ملزمین کو کلین چٹ دی گئی اور یوں انصاف کے سبھی دروازے بند کرتے ہوئے متاثرہ کنبہ جہاں دکھ اور غم کی سوغات ملی ،وہی انصاف کے حصول کے لئے آج بھی وہ دردر کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں چیرمین کی ھدائت پر تنظیم کئے ایک وفد مولانا جاوید احمد کی قیادت میں شوپیان جاکر لواحقین کے ساتھ ہمدردی کرتے ہوئے شہیدوں کے حق میں دعا ءکی۔
ظفر اکبر بٹ نے پارٹی لیڈرہلال احمد بیگ ،منظور احمد،محمد یاسین کے علاوہ مزاحمتی قائدین و کارکنان سمیت دیگر محبوسین کی بے وجہ نظربندی اور قید و بند پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انہیں مناسب طبی امداد فراہم نہیں کی جارہی ہے ۔انھوں نے اس بات پراپنے دکھ کا اظہار کیا کہ کے کیسوںکے سلسلے میں عدالتی کاروائی سست رفتاری سے جاری ہے جو ناانصافی کی ایک اور بڑی وجہ ہے ۔انھوں نے کہا کہ محبوسین مختلف جسمانی عوارض میں مبتلا ہے اور قید و بند کے دوران ان کا مناسب علاج و معالجہ ہونا ممکن نہیں اس لئے انہیں غیر مشروط طور رہا کیا جائے ۔
اپنے بیان میں ظفر اکبر بٹ نے وادی سے باہر جیلوں میں بند سبھی محبوسین کو وادی منتقل کرنے کی اپیل دہراتے ہوئے کہا کہ دنیا کے ہر خطے میں مقدس ایام پر قیدیوں کو رہا کیا جاتا ہے اورعید الفطر کے مقدس موقع پر اسی مطالبے کے پیش نظر براہ انسانیت ریاستی عوام سبھی قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ دہرارہے ہیں ۔
ظفر اکبر نے کوکرناگ اور کولگام میں شہید ہوئے جوانوں کو خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے لواحقین کے ساتھ ہمدردی و یکجہتی کا اظہار کیا۔
ظفر اکبر بٹ نے بھاجپا کی حکومت بننے کے فوراً بعدبھارت اور پاکستان کے وزرائے اعظم سے مخلصانہ اپیل کی کہ وہ آپس کے سبھی مسائل جس میں مسئلہ کشمیر سرفہرست ہے ،کو سلجھانے کے لئے مزاکرات کا طریقہ اختیار کریں تاکہ جنوب مغربی ایشاءمیں ،قتل غارتگری ،کشمکش اور جنگ و جدل کی فضا کا خاتمہ ہوسکے اور عوام کو سکھ چین کی سانس لینے کا موقع نصیب ہو۔
ترجمان 
جے کے سالویشن مومنٹ