eace is not possible in the region without resolving the Kashmir issue by implementing its UN resolution on Kashmir

 Islamabad: 21, Feb 2020: Chairman Kashmir Committee Syed Fakhr Imam has said that Kashmir and Pakistan are intertwined together, and can not ignore Kashmir for even a moment. Protests against Modi are spreading throughout India as a result of India's extremist policies. Modi has buried democratic values. Peace is not possible in the region without resolving the Kashmir issue by implementing its UN resolution on Kashmir.He expressed these views while addressing the seminar: Peace in South Asia: Prospects & Challenges, organized by Jammu Kashmir Salvation Movement today at Islamabad.
President Tehreek e Kashmir UK Raja Kayani during his address said that India has shown to the world that it is the worst form of democracy by eliminating Article 370 and 35A. This struggle is in line with the UN Chartered Kashmiris demand their birthright till Kashmiris get Freedom, and it will be continued until Kashmir is liberated from India. 
Tehreek-e-Kashmir Uk and Kashmiri and Pakistani Diaspora in UK and Europe are playing their part in Britain and other countries. Pakistan should end trade and diplomatic relations with India following India's extremist policies. 
While providing a brief report about the struggle of Tehreek e Kashmir (TeK) UK Raja Fahim Kayani said that TeK UK is playing its vital role in the diplomatic and international frontiers of the UK movement. There have been protests in which thousands of people have participated against Indian atrocities and in favour of the besieged people of Indian occupied Jammu and Kashmir.
Some people are disappointed that India is a big country and its economy is strong, but I do not accept this position. We must build confidence in ourselves. We must go ahead with confidence. The world wants to hear now. The world talks about India with extremist policies. International Newspapers, Magazines and channels are now exposing Indian Fascist government to the world.
President Tek Further said that Pakistan should give a roadmap to Kashmiris and Pakistanis residing abroad so that we could follow the lead and struggle in an organized manner. While the situations are changed now, people show their concern and commitment for Kashmir cause, Thousands of people come out for protests against India. Kayani added, 
Former Pakistan Ambassador Abdul Basit, Hurriyat leader Ms Shamim Shal and other leaders addressed the seminar, while the seminar included diplomats from different countries, leaders of the all-party Hurriyat Conference, Mohammad Khateeb, Sheikh Abdul Mateen, Malik Abdul Majid, Manzoorulhaq Butt, Shafiq Butt, Senior Journalist Aqeel Ahmed Tareen, Ghulam Mohiuddin Dar, Raja Bashir Usmani, Atif Bukhari, Engineer Hamad Mir, Sardar Azim, Amjad Mir, Arif Qureshi, and Ahtisham Mir were present at the occasion. While the programme was moderated by Abdullah Khan.
President Jammu Kashmir Salvation Movement Altaf Ahmed Bhat -host of the seminar- during his address said that There is talk of peace in the world today that all disputes are being resolved through peace. while 72 years ago in 1948, the UN after the ceasefire gave us hope that there would poll in Kashmir - and that peace and negotiations would be talked about at the moment, but the Kashmiri nation has been betrayed for 72 years. And I don't understand negotiations and resolution of the dispute through dialogue but the Kashmiri people have been betrayed for 72 years. India does not understand peace and negotiations.
 
If the people of Azad Kashmir did not face the Indian army in 1947, AJK would not have been free today - we followed the peaceful way till 1987 -but India forced through oppression, suppression, killings, and inhumane torture to raise guns.
 
Now there has been Intifada movement since 2008 millions of demand polls - India has created a war-torn atmosphere in the region and the war that will now lead to the destruction of world peace.
 
Altaf Ahmed Bhat further said that India understands the language of power and does not understand any other language. He said that Modi is carrying out extremist policies. All the gates of freedom and peace pass through Srinagar. We should not have any peace that costs Kashmir.
We will not accept any solution which is contrary to the wishes of Kashmiris.
Bhat while describing the hegemonic agenda of India under Modi, Amit Shah, and Ajit Doval said that India wants to become the greater hegemony in South Asia and trying to engulf Kashmir, But Without a solution to the Kashmir issue, the dream of peace in the region could never be achieved. Kashmir is a Nuclear Flashpoint between Pakistan and India, and the world recognizes it.
President JKSM and host of the Seminar Altaf Ahmed Bhat thanked all the distinguished guests including Chairman Kashmir Committee Syed Fakhr Imam, former Ambassador Abdul Basit, President Tehreek e Kashmir UK Raja Fahim Kayani.
Ambassador(R) Abdul Basit said, "India is basically a country that has taken a break from the first day and has adopted a disobedient policy."
Kashmir is a contentious area The UN resolutions testify that the future of Kashmir is yet to be decided. India has acknowledged itself in the UN and promised that Kashmiris will be given a chance to vote. And the UN declared that the Kashmiri people would be given the right to autonomy. He said that Pakistan has always demanded that the Kashmiris be given the right to self-determination. Pakistan is facing difficulties from India and Afghanistan, on the other hand.
India has not missed a chance to weaken Pakistan, Prime Minister Pakistan and Foreign Minister have to fulfil their responsibilities by mobilizing on the current situation in Kashmir.
Telling about the current situations in Indian occupied Jammu and Kashmir Ambassador(R) Abdul Basit said that, situations are very drastic in occupied Jammu and Kashmir Food medicine is out. Pakistan should attract international human rights organizations Amnesty International and other organizations to arrange food and medicine in occupied Kashmir.
Kashmiris are struggling historically and are making everlasting sacrifices. We have to play our role for the cause of Kashmir on the diplomatic and international frontier. Kashmiris want nothing but independence. The war is not in the interest of the two countries and India understands this too but in practice, India is not ready to come to Kashmir's solution.
Addressing the seminar Hurriyat leader Abdul Majid Malik said that people of Jammu and Kashmir have offered more than 500,000 martyrs for independence. Great sacrifices have been made in the history of mankind by Kashmiris. India has eliminated Article 370 and 35A and continuously planning to bring about demographic changes in Indian occupied Jammu Kashmir and Ladakh.
Leader of All Parties Hurriyat Conference MS Shamima Shawl said that Whoever wants to see the real face of India should visit Indian Gujarat and the occupied Jammu and Kashmir where India is committing state terrorism and grave human rights violations. The government of Pakistan will have to play a vital role with regard to Kashmir. India is oppression in occupied Kashmir, violating the rights of children, orphans and women. Women are turned into half widows. While the backbone of Kashmir that is tourism, Fruits, and Handicraft are being destroyed by India to paralyze the besieged people of Indian occupied Jammu and Kashmir.
اسلام آباد( راجہ بشیر عثمانی)چیرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام نے کہا ہے کہ کشمیر وپاکستان لازم وملزوم  ہم ایک لمحہ کےلیے بھی کشمیر کو نظر انداز نہیں کرسکتے  بھارت کی انتہا پسندانہ پالیسیوں کے نتیجے میں سارے بھارت میں مودی کے خلاف احتجاج  جاری ہے مودی نے جمہوری اقدار دفن کردی ہیں  عالمی برادری بھارت کے انتہا پسندانہ اقدامات کا نوٹس لے اقوام متحدہ کشمیر سے متعلق اپنی قراردادوں پر عملدرآمد کرواے مسلہ کشمیر حل کیے بغیر خطے میں امن کا قیام ممکن نہیں ہے-اُنہوں نے کہا پاکستان کی موثر سفارتکاری اور اخلاقی و سیاسی سپورٹ کی وجہ سے کشمیریوں کی قربانیاں رنگ لائی ہے-ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز جموں کشمیر سالویشن موومنٹ کے زیر اہتمام کشمیر سیمینار سے خطاب کرتے ہوے کیا صدر تحریک کشمیر برطانیہ راجہ فہیم  کیانی نے کہا کہ بھارت نے 370 اور 35A ختم کرکے جمہوریت اور جمہوری اقدار کا جنازہ نکال دیا ہے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی منبنی برحق ہے اور یہ جدوجہد اقوام متحدہ کے چارٹرڈ کے عین مطابق ہے کشمیری اپنا پیداہیشی حق مانگتے ہیں  جب تک کشمیریوں کو یہ حق نہیں ملتا وہ آزادی کی جدوجہد ہرحال میں جاری رکھیں گے برطانیہ اور دوسرے ممالک میں  کشمیر کاز کےلیے اپنے حصے کا کردار ادا کررہے ہیں  پاکستان کو چاہیے کہ وہ بھارت کی انتہا پسندانہ پالیسیوں کے بعد بھارت سے تجارتی و سفارتی تعلقات  ختم کرے راجہ فہیم کیانی نے کہا کہ تحریک کشمیر برطانیہ  تحریک آزادی کے سفارتی اور بین الااقوامی محاذ پر اپنا بھرپور کردار ادا کررہے ہیں ہمیں آزادی کی اس تحریک کو منزل تک پہنچانے کےلیے تحریک کو مزید تیز تر کرنا ہوگا ہم نے برطانیہ اور دوسرے شہروں میں بڑے بڑے احتجاجی مظاہرے کیے ہیں جن میں لاکھوں افراد شریک ہوے ہیں بعض لوگ مایوسی کی باتیں کرتے ہیں کہ بھارت بڑا ملک ہے اس کی معشیت مضبوط ہےمیں اس موقف کو تسلیم نہیں کرتا ہمیں اپنے اندر اعتماد پیدا کرنا چاہیے اعتماد کے ساتھ آگےبڑھیں دنیا اب بات سنناچاہتی ہے بھارت کی انتہا پسندانہ پالیسیوں سے دنیا بھارت پر بات کرتی ہے حکومت پاکستان کو بیرون ممالک میں مقیم کشمیریوں اور پاکستانیوں کو روڈمیپ دینا چاہیے تاکہ اس پر ہم چل سکیں عوام باہر نکلتے ہیں اتحاد ویکجہتی کے ساتھ کشمیر کاز کےلیے آگے بڑھنا ہوگا  صدر تحریک کشمیر برطانیہ پاکستان کے سابق سفیر عبدالباسط،حریت راہنما محترمہ شمیم شال اور دیگر رانماوں نے خطاب کیا  جبکہ سیمینار میں مختلف ملکوں کے سفارتکاروں،کلُ جماعتی حریت کانفرنس کے راہنماوں محمد خطیب،شیخ عبدالمتین،ملک عبدالمجید، منظورالحق بٹ،مشتاق عسکری،شفیق بٹ  سنیر صحافی عقیل احمد ترین،غلام محی الدین ڈار،راجہ بشیر عثمانی،عاطف بخاری،انجینیر حماد میر،سردار عظیم،امجد میر اور عارف قریشی  دیگر شریک تھے- سٹیج سیکٹری کی زمہ داری عبداللہ خان نے نبھائی-اس موقع پر تقریب کے میزبان معروف کشمیری حریت پسند راہنماء الطاف احمد بٹ نے کہا کہ آج دنیا میں امن کی باتیں ہورہی ہے کہ امن کے ذریعے تمام تنازعات حل کیے جاہیں آج سے بہتر سال پہلے 1948 میں اقوام متحدہ نے سیز فائر کرکے ھمیں آس اور امید دلوائی کہ کشمیر میں رائے شماری کی جائگی-اور اُسوقت بھی یہی امن اور مذاکرات کی بات کی گی لیکن کشمیری قوم سے 72 سال تک دھوکہ کیا گیا ہے بھارت امن اور مذاکرات کی بات نہیں سمجھتا- اگر آزاد کشمیر کے لوگ 1947 میں بھارتی فوج کا مقابلہ نہی کرے تو آج آزاد نہی ھوتا-ھم نے 1987 تک پرُامن طریقہ  اختیار کیا- مگر ھمیں بھارت نے بندوق اُٹھانے پر مجبور کیا۔اور اب وہاں 2008 سے انتفادہ کی تحریک چل رہی ہے-لاکھوں لوگ سڑکوں پر رائے شماری کا مطالبہ کرتے ہیں-بھارت نے خطے میں جنگی ماحول پیدا کیا ہے اور اب جو جنگ ھوگی پوری دُنیاں کا امن تباہ ھوگا-بھارت طاقت کی زبان سمجھتا ہے اس کے علاوہ وہ کوئ دوسری زبان نہیں سمجھتا انہوں نے کہا کہ مودی انتہا پسندانہ پالیسیوں کو لیکر چل رہا ہے آزادی اور امن کے تمام دروازے سرینگر سے ہوکر  جاتے ہیں- ھمیں کوئی ایسا امن نہی چاہئے جو کشمیر کی قیمت پر ھو- ھم کشمیری کوئی ایسا حل قبول نہی کرینگے جو کشمیریوں کی خواہشات کے برعکس ھو- مسلہ کشمیر کے حل کے بغیر خطے میں امن کا خواب کبھی شرمندہ تعبیر نہیں ہوسکتا امن تب اس خطے میں آے گا جب مسلہ کشمیر وہاں کے  عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائگا- آج کا یہ سیمینار بہت اہمیت کا حامل ہے چیرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام  تحریک کشمیر کے صدر راجہ فہیم کیانی سابق سفیر عبدالباسط سمیت تمام معزز مہمانوں کا شکریہ ادا کرتے ہی ںسابق سفیر عبدالباسط نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ بھارت بنیادی طور پر ایسا ملک ہے جس نے اول روز سے ہٹ دھری اور میں نہ مانوں کی پالیسی اختیار کیے ہوے ہے کشمیر متنازعہ علاقہ ہے اقوام متحدہ کی قراردادیں اس بات کی گواہ ہیں کہ کشمیر کے مستقبل کا فیصلہ ہونا باقی ہے بھارت نے خود اقوام متحدہ میں تسلیم کررکھا ہے اور وعدہ کیاتھا کہ  کشمیریوں کو استصواب راے کا موقع دیاجاے گا  اور اقوام متحدہ   نے قرار دیا تھا کہ کشمیری عوام کو حق خودارادیت دیا جاے گا انہوں نے کہا کہ پاکستان نے ہمیشہ کشمیریوں کو حق خودارادیت دہیے جانے کا مطالبہ کیا ہے اس حوالے سے ہر پلیٹ فارم پر آواز بلند کی ہے پاکستان کو اس وقت ایک طرف  بھارت اور دوسری طرف افغانستان سرحد سے مشکلات کا سامنا ہے بھارت پاکستان کو کمزور کرنے کےلیے کوئ موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیا  وزیر اعظم پاکستان اور وزیر خارجہ کو کشمیر کی موجودہ صورتحال پر متحرک ہوکر اپنی ذمہ داریاں ادا کرنا ہوں مقبوضہ جموں وکشمیر میں حالات بہت خراب ہیں خوراک ادویات ختم ہیں پاکستان کو چاہیے کہ وہ عالمی انسانی حقوق کی تنظیموں ایمنسٹی انٹرنیشنل اور دوسری تنظیموں کو متوجہ کرے مقبوضہ کشمیر میں خوراک اور ادویات پہنچانے کا اہتمام ہونا چاہیے  عبدالباسط نے کہا کہ کشمیری تاریخی جدوجہد کررہے ہیں اور لازوال قربانیاں دے رہے ہیں  ہمیں سفارتی اور بین الااقوامی محاذ پر کشمیر کاز کے لیے اپنا کردار ادا کرنا ہوگا کشمیریوں کوآزادی کے علاوہ کچھ نہیں چاہیے کشمیریوں کی منزل آزادی اور حق خودارادیت ہے جنگ دونوں ملکوں کے مفاد میں نہیں ہے اور بھارت بھی اس بات کو سمجھتا ہے لیکن عملی طور پر بھارت مسلہ کشمیر کے حل کی طرف آنے کو بھی تیار نہیں ہے  کشمیر کمیٹی کوبھی فعال اور متحرک ہوکر کشمیریوں کی اوازبننا راجہ فہیم کیانی نے کہا کہ تحریک کشمیر برطانیہ  تحریک آزادی کے سفارتی اور بین الااقوامی محاذ پر اپنا بھرپور کردار ادا کررہے ہیں ہمیں آزادی کی اس تحریک کو منزل تک پہنچانے کےلیے تحریک کو مزید تیز تر کرنا ہوگا ہم نے برطانیہ اور دوسرے شہروں میں بڑے بڑے احتجاجی مظاہرے کیے ہیں جن میں لاکھوں افراد شریک ہوے ہیں بعض لوگ مایوسی کی باتیں کرتے ہیں کہ بھارت بڑا ملک ہے اس کی معشیت مضبوط ہےمیں اس موقف کو تسلیم نہیں کرتا ہمیں اپنے اندر اعتماد پیدا کرنا چاہیے اعتماد کے ساتھ آگےبڑھیں دنیا اب بات سنناچاہتی ہے بھارت کی انتہا پسندانہ پالیسیوں سے دنیا بھارت پر بات کرتی ہے حکومت پاکستان کو بیرون ممالک میں مقیم کشمیریوں اور پاکستانیوں کو روڈمیپ دینا چاہیے تاکہ اس پر ہم چل سکیں عوام باہر نکلتے ہیں اتحاد ویکجہتی کے ساتھ کشمیر کاز کےلیے آگے بڑھنا راجہ فہیم کیانی نے کہا کہ ہم کشمیر کےلیے ایک لاکھ افراد کو سڑکوں پر لانے کےلیے تیار ہیں لیکن جس دن ہم احتجاج کریں بیس کیمپ اور پاکستان میں بھی اس دن لاکھوں لوگ سڑکوں پر نکلیں حریت کانفرنس کے راہنماء منظورالحق بٹ نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ بھارت میں کانگریس کی حکومت  ہو یا بی جے پی کی ہر دور میں مسلمانوں کو ٹارگٹ کیا گیا تحریک آزادی کشمیر کو ہر دور میں نقصان پہنچایا گیا ہے کشمیریوں نے جان و مال عزت و آبرو ہر قسم کی قربانی پیش کی ہے دس لاکھ قابض فوج نے کشمیر کو مقتل گاہ بنا رکھا ہے حکومت پاکستان کشمیر کے حوالے سے ایک مضبوط پالیسی بناے اور کشمیریوں کا مزید قتل عام ہونے سے روکے  حریت کانفرنس کے راہنما عبدالمجید ملک نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ جموں و کشمیر کے عوام نے آزادی کےلیے پانچ لاکھ سے زاہد شہداء پیش کیے ہیں تاریخ کی عظیم قربانیاں دی ہیں بھارت 370 اور 35 اے ختم کرچکا ہے اس کے ذریعے وہ جموں وکشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنا چاہتا ہے ہمیں اتحا دویکجہتی کے ساتھ آگے بڑھنا ہوگاحریت کانفرنس کی راہنما محترمہ شمیم شال نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ جو بھی   بھارت کا اصل چہرہ دیکھنا چاہتا ہے وہ بھارتی گجرات کا دورہ کرے مقبوضہ جموں وکشمیر کا دورہ کرے جہاں بھارت انسانی حقوق کا جنازہ نکال چکا ہے بھارت نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں مکمل بلیک اوٹ کر رکھا ہے اس موقع پر حکومت پاکستان کو کشمیر کے حوالے سے جاندار کردار ادا کرنا ہو گا بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کا بازار گرم کررکھا ہے بچے یتیم اور خواتین بیوا ہورہی ہیں انسانی حقوق کی بدترین پامالی ہورہی ہے بھارت مقبوضہ کشمیر میں معشیت تباہ کررہا ہے چونکہ معشیت کشمیریوں کےلیے ریڑھ کی ہڈی رکھتی ہے بچوں کی تعلیم کے راستے بند کررہا ہے عالمی برادری کو بھارت کے ان مذموم حربوں کا نوٹس لینا چاہیے